تازہ ترین

صاف توانائی کی پیداوار کے متعلق بڑی کامیابی

نیو جرسی – سائنس دانوں نے مصنوعی ذہانت کو استعمال کرتے ہوئے نیوکلیئر فیوژن کی مدد سے لامحدود صاف توانائی بنانے کا مسئلہ حل کردیا۔ امریکا کی پرنسٹن یونیورسٹی کے محققین نے فیوژن ری ایکشن کے دوران پلازما میں عدم استحکام کو روکنے اور اس کے متعلق پیش گوئی کرنے کے لیے مصنوعی ذہانت کے ایک ماڈل کو استعمال کرنے کا طریقہ کار وضع کیا۔

نیوکلیئر فیوژن کو فاسل ایندھن استعمال کیے بغیر یا زہریلا فضلہ پیچھے چھوڑے بغیر بڑی مقدار میں صاف توانائی پیدا کرنے کی صلاحیت پر سراہا جاتا ہے۔

یہ عمل سورج پر ہونے والے قدرتی ری ایکشنز کی نقل کرتا ہے۔ تاہم، اس دوران نیوکلیئر فیوژن توانائی کو جوڑنا اتنہائی مشکل عمل ثابت ہوا ہے۔

2022 میں کیلیفورنیا سے تعلق رکھنے والے محققین پہلی بار نیوکلیئر فیوژن سے اضافی توانائی حاصل کرنے میں کامیاب ہوئے تھے۔یہ توانائی قلیل مقدار میں تھی (جس سے بمشکل ایک کیتلی گرم ہوتی) لیکن بڑی مقدار میں توانائی حاصل کرنے کے لیے ایک بڑی کامیابی تھی۔

تازہ ترین دریافت کا مطلب ہے کہ اے آئی کی پلازما میں ہونے والے عدم استحکام کی 300 ملی سیکنڈ قبل پیش گوئی کی صلاحیت، ایک اور بڑی کامیابی ہے۔ یہ وقت پلازما کو قابو میں رکھنے کے لیے کافی ہوتا ہے۔ محققین کے مطابق یہ نیا فہم نیوکلیئر فیوژن توانائی کو گرڈ اسکیل میں ڈھالنے کے لیے مدد دے سکتا ہے۔