تازہ ترین

سپریم کورٹ نے شہریوں کے فوجی ٹرائل کو کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد – سپریم کورٹ آف پاکستان نے شہریوں کے فوجی ٹرائل کو ’غیر آئینی‘ قرار دے دیا۔ جسٹس اعجاز الاحسن کی سربراہی میں جسٹس منیب اختر، جسٹس یحییٰ آفریدی، جسٹس سید مظاہر علی اکبر نقوی اور جسٹس عائشہ ملک پر مشتمل سپریم کورٹ کے پانچ رکنی بینچ نے درخواستوں کی سماعت کی۔

سپریم کورٹ نے محفوظ فیصلہ 4-1 سے سنایا۔ پی ٹی آئی کے چیئرمین اور دیگر نے 9 مئی کو القادر ٹرسٹ کیس میں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ عمران خان کی گرفتاری کے بعد شروع ہونے والے فسادات میں نامزد شہریوں کے فوجی ٹرائل کو چیلنج کرتے ہوئے سپریم کورٹ میں درخواست دائر کی۔

اٹارنی جنرل آف پاکستان منصور عثمان اعوان نے اپنے دلائل پیش کرتے ہوئے کہا کہ وہ عدالت کو بتائیں گے کہ دہشت گردوں کے خلاف مقدمہ چلانے کے لیے 2015 میں فوجی عدالتیں بنانے کے لیے آئینی ترمیم کیوں ضروری تھی۔

جسٹس احسن کے سوال کے جواب میں اے جی پی اعوان نے کہا کہ جن ملزمان پر فوجی عدالتوں میں مقدمہ چلایا گیا وہ مقامی اور غیر ملکی شہری تھے۔

انہوں نے کہا کہ ملزمان پر آفیشل سیکرٹ ایکٹ کی دفعہ 2 (1) (D) کے تحت مقدمہ چلایا جائے گا اور آرمی ایکٹ کے تحت مقدمہ فوجداری مقدمے کے تمام تقاضوں کو پورا کرے گا۔

انہوں نے کہا کہ 9 مئی کے ملزمین کا ٹرائل فوجداری عدالت کے طریقہ کار کے مطابق کیا جائے گا۔”

اٹارنی جنرل آف پاکستان (اے جی پی) منصور عثمان اعوان کی جانب سے آرمی ایکٹ کے تحت عام شہریوں کے خلاف مقدمہ چلانے کے لیے فوجی عدالتوں کے دائرہ کار اور دائرہ کار کے بارے میں اپنے دلائل مکمل کیے جانے کے بعد فیصلہ محفوظ کر لیا گیا۔

اس سے قبل وفاقی حکومت نے سپریم کورٹ کو آگاہ کیا تھا کہ فوجی عدالتوں نے شہریوں کے مقدمات کی سماعت شروع کر دی ہے۔

حکومت نے عدالت عظمیٰ کو متفرق درخواست میں عدالت کے 03 اگست کے حکم کے جواب میں شہریوں کے ٹرائل کے آغاز کے بارے میں بتایا۔ حکومت نے عدالت سے اپنی درخواست میں کہا کہ 09 مئی اور 10 واقعات کے بعد کل 102 افراد کو گرفتار کیا گیا۔