تازہ ترین

پاکستان چین پر اندھا اعتماد کرتا ہے، نگراں وزیراعظم انوار الحق کاکڑ

بیجنگ – نگراں وزیراعظم انوار الحق کاکڑ نے کہا ہے کہ پاکستان چین پر اندھا اعتماد کرتا ہے اور وہ چین کے ساتھ شراکت داری کو نقصان پہنچانے کی کسی کو اجازت نہیں دے گا۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعرات کے روز بیجنگ میں چینی صدر شی جنگ پنگ سے ملاقات میں کیا۔ تیسرے بلیٹ اینڈ روڈ فارم کی سائیڈ لائن پر گریٹ ہال آف پیپل میں 140 ممالک کے سربراہان و وزرائے اعظم کی ملاقات ہوئی۔

عبوری وزیر اعظم نے اس بات پر بھی زور دیا کہ پاکستان ثابت قدمی سے چین کے شانہ بشانہ کھڑا رہے گا اور دو طرفہ شراکت داری کو نقصان پہنچانے کی اجازت نہیں دے گا۔

میٹنگ میں اپنے ابتدائی کلمات کے دوران وزیر اعظم کاکڑ نے چین کے لیے پاکستان کی بھرپور حمایت کا اعادہ کیا اور اس بات پر زور دیا کہ پاکستان کے عزم کا اظہار صرف الفاظ سے نہیں بلکہ عمل سے کیا جائے گا۔

وزیراعظم نے اس ملاقات کے حوالے سے سماجی رابطے کی سائٹ پر پیغام اور تصاویر شیئر کرتے ہوئے لکھا کہ ’عوامی ہال میں چینی صدر سے ملاقات ہوئی، جس میں ہم نے کثیر الجہتی پاک چین تعلقات کی مختلف جہتوں پر تبادلہ خیال کیا اور اقتصادی و تجارتی تعلقات کی دسویں سالگرہ پر مبارک باد پیش کی۔

وزیراعظم کاکڑ نے واضح کیا کہ پاکستان کا چین کے ساتھ قریبی تعلقات سے پیچھے ہٹنے کا کوئی ارادہ نہیں ہے۔

دریں اثناء صدر شی نے وزیراعظم اور ان کے ہمراہ آنے والے وفد کا پرتپاک استقبال کیا جس میں نگراں وفاقی وزیر خزانہ شمشاد اختر، نگراں وفاقی وزیر داخلہ سرفراز بگٹی، نگراں وزیر خارجہ جلیل عباس جیلانی اور نگراں وفاقی وزیر تجارت و صنعت و تجارت گوہر اعجاز شامل تھے۔

وزیر اعظم نے اس بات کی بھی نشاندہی کی کہ چینی صدر کی جانب سے فورم میں پیش کردہ آٹھ تجاویز بہت اہم اور آپس میں جوڑنے والی ہیں۔ انہوں نے بیلٹ اینڈ روڈ انیشیٹو کو دنیا بھر میں متعدد اقوام کو درپیش سیاسی، اقتصادی اور تہذیبی چیلنجوں کے لیے ایک عملی اور عملی ردعمل کے طور پر بیان کیا۔

وزیر اعظم کاکڑ نے اعتراف کیا کہ چین کی بے مثال ترقی نے عالمی رول ماڈل کے طور پر کام کیا، جس نے لاکھوں لوگوں کی زندگیوں کو بدل دیا۔ پاکستان کے تمام سیاسی ڈھانچے میں چین کے لیے متفقہ حمایت موجود ہے۔

چینی صدر نے جواب میں کہا کہ چین اپنی روایتی دوستی کو مزید مضبوط بنانے اور دوطرفہ شراکت کو مزید گہرا کرنے کے لیے پاکستان کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لیے تیار ہے۔ انہوں نے علاقائی امن اور ترقی کے لیے کام کرتے ہوئے اعلیٰ معیار کی ترقی کے عزم کے ساتھ چین پاکستان اقتصادی راہداری (CPEC) کی ترقی کو تیز کرنے کے اپنے عزم کا اعادہ کیا۔