تازہ ترین

ناخن کھانے کی عادت اور اس کے صحت سے متعلق خطرات

ناخن کھانے کی عادت جسے onychophagia کہا جاتا ہے، بچوں اور بڑوں دونوں کو ہوسکتی ہے۔ اگرچہ یہ بے ضرر معلوم ہوتا ہے لیکن ناخن کھانے کے طویل مدتی عادت صحت سے متعلق کئی ممکنہ خطرات ہوسکتے ہیں جو کہ درج ذیل ہیں:

انفیکشن: ناخن کھانے سے منہ میں بیکٹیریا اور دیگر جراثیم داخل ہو سکتے ہیں، ناخنوں، انگلیوں اور یہاں تک کہ منہ اور گلے میں انفیکشن کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔

ناخنوں کا نقصان: بار بار ناخن کھانے سے ناخن خراب اور کمزور ہوجاتے ہیں جس سے وہ باآسانی ٹوٹ سکتے ہیں۔ علاوہ ازیں فنگل انفیکشن کا بھی زیادہ خطرہ ہے۔ یہ ناخن کے ارد گرد کناروں (cuticles) کو بھی نقصان پہنچاتا ہے جو کہ ناخنوں کی جڑ کی جِلد میں شدید درد کا باعث بن سکتا ہے۔

دانتوں کے مسائل: ناخن کھانے کی عادت وقت کے ساتھ ساتھ دانتوں کے مسائل کا سبب بھی بن سکتا ہے جیسے خراب دانت، دانتوں کا ٹیڑھا پن اور ممکنہ جبڑے کے مسائل۔ یہ خاص طور پر اس وقت ہوتا ہے جب عادت شدید اور طویل مدتی ہو۔

بیماری کا خطرہ: انگلیاں منہ میں کثرت سے داخل کرنا زیادہ جراثیم سے نمائش کرواسکتا ہے جس کے نتیجے میں نزلہ، فلو اور دیگر بیماریوں کے ساتھ ساتھ معدے کے انفیکشن کا خطرہ بھی بڑھ جاتا ہے۔

جِلد کے مسائل: ناخن کھانے سے ناخنوں کے جلد کے مسائل پیدا ہوجاتے ہیں، جیسے سرخی، سوجن اور سوزش۔ یہ dermatitis جیسے انفیکشن کا خطرہ بن سکتا ہے۔

جذباتی اور نفسیاتی اثرات: ناخن کھانے کا تعلق اکثر تناؤ، اضطراب یا بوریت سے ہوتا ہے۔ یہ ایسے جذبات سے نمٹنے کا طریقہ ہوسکتا ہے۔ اگر بنیادی وجوہات پر توجہ نہ دی جائے تو یہ دماغی صحت کے مسائل بھی پیدا کرسکتا ہے۔