تازہ ترین

چائلڈ پورنوگرافی کے مجرم شہزاد خالق کی 14 سال قید، 10 لاکھ روپے جرمانے کی سزا برقرار

اسلام آباد( سن نیوز)اسلام آباد ہائی کورٹ نے چائلڈ پورنوگرافی کے مجرم شہزاد خالق کی سزا کے خلاف اپیل مسترد کرتے ہوئے مجرم کی 14 سال قید اور 10 لاکھ روپے جرمانے کی سزا برقرار رکھی ہے۔
اسلام آباد ہائی کورٹ نے وفاقی حکومت کو ہدایت جاری کی ہے کہ پیکا ایکٹ میں ترمیم کرکے چائلڈ پورنوگرافی کے جرم کی سزا 7 سال قید سے بڑھا کر 14 سال کی جائے۔ عدالت نے قرار دیا کہ ویڈیو ثبوت کی فارنزک ایجنسی سے تصدیق ہوجائے تو چائلڈ پورنوگرافی اور جنسی جرائم کے متاثرین کو عدالت بلانے کی ضرورت نہیں، ملزمان کو سزا دینے کے لیے فارنزک سائنس لیبارٹری کی رپورٹ کو حتمی تصور کیا جائے۔
اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس محسن اختر کیانی نے چائلڈ پورنوگرافی کے مجرم شہزاد خالق کی سزا کے خلاف اپیل مسترد کرنے کا 24 صفحات پر مشتمل تحریری فیصلہ جاری کیا۔عدالت نے چائلڈ پورنوگرافی کے کیسز میں انٹرنیشنل اسٹینڈرڈز کو فالو کرنے کے لیے گائیڈلائنز جاری کی ہیں۔عدالت نے کہا کہ ٹرائل کورٹس یقینی بنائیں کہ چائلڈ پورنوگرافی کے کیسز کا ان کیمرا ٹرائل کیا جائے، متاثرہ بچے کو عدالت میں ملزم کے ساتھ پیش نہ کیا جائے، بیان ویڈیو لنک کے ذریعے ریکارڈ کیا جائے۔تحریری فیصلے میں کہا گیا ہے کہ اگر ویڈیو ثبوت کی فارنزک ایجنسی سے تصدیق ہوجائے تو چائلڈ پورنوگرافی اور جنسی جرائم کے متاثرین کو عدالت بلانے کی ضرورت نہیں، سزا کے لیے فارنزک سائنس لیبارٹری کی رپورٹ کو حتمی تصور کیا جائے۔عدالت نے مجرم شہزاد خالق کی اپیل مسترد کرتے چائلڈ پورنوگرافی کے جرم میں 14 سال قید، 10 لاکھ روپے جرمانہ، نازیبا ویڈیوز بناکر بلیک میل کرنے پر 5 سال قید اور اسلحہ دکھاکر جان سے مارنے کی دھمکیوں پر 2 سال قید کی سزا برقرار رکھنے کا فیصلہ سنایا۔سزا یافتہ شہزاد کو سیشن کورٹ نے 2 ستمبر 2020 کو پاکستان پینل کوڈ کی 3 دفعات کے تحت سزائیں سنائی تھیں، فارنزک رپورٹ میں سیکڑوں پورن وڈیوز بنانے کی تصدیق ہوئی زیادہ تر وڈیوزمیں اپیل کنندہ خود ہے۔

.

اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں