تازہ ترین

جی چاہتا ہے جسٹس (ر) جاوید اقبال کا وارنٹ گرفتاری جاری کروں، نور عالم خان

اسلام آباد (سن نیوز)پبلک اکاؤنٹس کمیٹی (پی اے سی) کے چیئرمین نور عالم خان کا کہنا ہے کہ جی چاہتا ہے جسٹس (ر) جاوید اقبال کا وارنٹ گرفتاری جاری کروں، اس شخص نے نیب کا نام بھی خراب کیا ہے۔
جسٹس (ر) جاوید اقبال کی جانب سے خاتون کو ہراساں کیے جانے کے معاملے پر پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کا اہم اجلاس ہوا، جس میں گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین پی اے سی نور عالم خان نے کہا کہ جسٹس (ر) جاوید اقبال نے خط لکھا ہے کہ میں عید کی چھٹی پر گھر چلا گیا ہوں۔ ہم اختیارات کے اس قدر ناجائز استعمال کو برداشت نہیں کر سکتے۔سابق چیئرمین نیب پر الزام لگانے والی طیبہ گل پبلک اکاؤنٹس کمیٹی میں پیش
قائم مقام چیئرمین نیب ظاہر شاہ نے اجلاس سے جانے کی اجازت طلب کی، جس پر نور عالم خان نے کہا کہ آپ کا بیٹھنا ضروری ہے، آپ کے ادارے کی ساکھ پر سوال اٹھے ہیں، آپ کمیٹی سے نہیں جا سکتے۔
چیئرمین پی اے سی نور عالم خان نے قائم مقام چیئرمین نیب سے سوالات پوچھتے ہوئے کہا کہ بی آر ٹی کرپشن ریفرنس کہاں گیا؟ بینک آف خیبر کا کیا کیا؟ بلین ٹری سونامی کا کیا کیا؟ مالم جبہ کا کیا کیا؟
جاوید اقبال نے خاتون کو کہا آپ اتنی خوبصورت ہیں، آپ کو شوہر کی کیا ضرورت ہے، نور عالم خانقائم مقام چیئرمین نیب ظاہر شاہ نے جواب دیتے ہوئے کہا کہ مالم جبہ کیس بند ہو چکا ہے، جس پر نور عالم خان نے کہا کہ ہم ہدایات دیتے ہیں کہ اس کیس کو ری اوپن کریں، ہمیں رپورٹ دیں، کتنے وقت میں رپورٹ دیں گے؟ جواب میں ظاہر شاہ نے کہا کہ چھ ماہ میں رپورٹ دیں گے۔نور عالم خان نے کہا کہ آپ کے پاس سالوں سے یہ کیس پڑے ہیں، آپ کے پاس فائلیں تیار ہیں، بلین ٹری کیس کا کیا کیا ہے؟ اب تو لوگوں نے درخت جلانا شروع کردیے ہیں۔نور عالم خان نے مزید کہا کہ پبلک اکاؤنٹس کمیٹی ان چاروں کیسز پر فوری تحقیقات کا حکم دیتی ہے۔

 

اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں